اردو کوڈر لینکس فورم





خوش آمدید مہمان
ہمارے فورم پر لکھنے کے لیے آپ کو شمولیت اختیار کرنی ہوگی.

اسمِ صارف/ای میل:
  

پاس ورڈ
  





فورم میں تلاش کریں

(اعلی تلاش)

فورم کی شُماریات
» ارکان: 235
» نیا رکن: محمد ابراہیم راجپوت
» فورم کے دھاگے: 820
» فورم کے مراسلے: 4,753

مُکمل شُماریات

تازہ ترین دھاگے
ٹوٹے
02-07-2016, 05:14 PM

آخری مراسلہ: محمد علی مکی
Psychology of rapist
02-06-2016, 12:27 PM

آخری مراسلہ: Abeeha Ayan
موسیقی سے علاج
02-06-2016, 11:09 AM

آخری مراسلہ: راحت
پسندیدہ شعر
02-03-2016, 07:40 PM

آخری مراسلہ: Abeeha Ayan
بیت بازی (2016)
02-03-2016, 06:12 PM

آخری مراسلہ: راحت
پاکستان کی تاریخ کا سب سے...
01-16-2016, 03:43 PM

آخری مراسلہ: تجمل حسین
اردو ترجمہ درکار ہے
01-11-2016, 09:42 AM

آخری مراسلہ: محمد علی مکی

 
  موسیقی سے علاج
ارسال کردہ از: راحت - 02-04-2016, 08:29 PM - فورم: مزاحیہ شاعری - جوابات (2)

ایک محقق نے نئی تحقیق فرما دی ہے آج
فنِ موسیقی سے بھی ممکن ہے انسانی علاج

سچ ہے یہ دعویٰ تو رخصت اے اطبائے کرام
مسطگی کو بندگی، قرص ملین کو سلام

اب مداوائے مرض ہوگا نئے انداز سے
اب ہوالشافی کی آواز آئےگی ہر ساز سے

اب تو نوٹنکی ہی میں ہوگا علاجِ سامعین
الفراق اے گل بنفشہ، الوداع اے پنسلین

نامور قوال پورے ڈاکٹر ہو جائیں گے
صرف سازندے جو ہیں کمپاؤنڈر ہو جائیں گے

اب دوا خانوں پہ ایسے بورڈ آئیں گے نظر
مطرب آتش نوا مس ناز لیڈی ڈاکٹر

تھرمامیٹر کی جگہ منہ میں لگا کے بانسری
ڈاکٹر دیکھے گا کیا حالت ہے اب بیمار کی

موت تو اس شخص تک آتے ہوئے گھبرائے گی
جس کے سر پر نزع میں ڈفلی بجائی جائے گی

چونکہ نسخوں میں رعایت ہوگی صرف اشعار کی
صرف شاعر کو جگہ دی جائے گی عطار کی

پڑ گئے معجون میں کیڑے اور خمیرہ سڑ گیا
بو علی سینا کی امیدوں پہ پانی پڑ گیا

حضرت اجمل کے جادو کا اثر ہوا زائل
آدمی فیاض خان کے آرٹ کا ہوا قائل

اس کو کہتے ہیں خدا کی دین، ہوتی ہے یہ دین
اب سول سرجن بنے گا جانشینِ تان سین

اب اطبا بھی نظر آئیں گے شہنائی بدست
شربتِ عناب کی بوتل کو پیغامِ شکست

ان سے کہہ دو مبتلا ہیں جو کسی آزار میں
اب شفا خانے کھلیں گے حسن کے بازار میں

قبض کے مارے ہوئے بیمار کو کر دو خبر
ایک ٹھمری ہے اطریفل زمانی کا اثر

اب تو اخباروں میں شائع ہوں گے ایسے اشتہار
جملہ امراض خصوصی کی دوا طبلہ ستار

جملہ امراضِ خبیثہ کی دوائے کارگر
نغمہِ ساحر باآواز لتا منگیشکر

ضعف معدہ ہے تو مس کجن کی قوالی سنو
خشک کھانسی ہے تو نظم حضرتِ حالی سنو

کیا ضروری ہے کہ پیچش کی دوا ہو اسپغول
ادویاء تو اور بھی ہیں، بین باجا بینڈ ڈھول

اختلاجِ قلب کی واحد دوا ہے آج کل
بیکل اتساہی سے سنئے اے مری جان غزل

اس طرح نسخہ لکھے گا چارہ ساز، نبض بین
دادرا دس بارہ، ٹھمری دو عدد ایک بھیرویں

صبح دم مثل شکیلہ مشق قوالی کنند 
خاک پائے مشتری بائی بوقت شب خورند


Bug Psychology of rapist
ارسال کردہ از: Abeeha Ayan - 01-12-2016, 10:15 PM - فورم: بنیادی سائنس - جوابات (2)

[تصویر: attachment.php?aid=80]

ریپ ایک پیچیدہ اور نازک مسئلہ ہے. اس کی وضاحت ہر دور میں بدلتی رہی ہے. کہیں پر زبردستی penetration کو ریپ کہا گیا ہے کہیں پر براہ راست یا بالواسطہ زبردستی کو ہی ریپ کے زمرے میں گردانا جاتا ہے. کچھ ممالک میں پارٹنر کے ساتھ زبردستی کی کو شش بھی ریپ میں شمار ہوتی ہے اس پر بھی قانون سازی ہو چکی ہے. میں یہاں بات کروں گی ریپ (rape) کرنے والے کی نفسیات پر اور ان عوامل پر جو ایک فرد کےلیے ریپ کی تحریک کا باعث بنتے ہیں. ایک فرد ریپ کرنے کےلیے کیوں آمادہ ہوتا ہے؟ ایک ریپسٹ کے شخصی خصائص ایک نارمل فرد سے مختلف ہوتے ہیں اس کے شخصی بگاڑ کے پیچھے کوئی ایک فیکٹر نہیں ہوتا بلکہ جب آپ ایک ریپسٹ کی شخصیت کو سمجھنا چاہتے ہیں تو اس کی سونح حیات (ھسٹری) کو جانچنا ضروری ہے.

Factors responsible for sexual offending behavior.
تحریکات (motivators)
جنسی خواہش, گمراہ کن جنسی خواہش,جنسی لذت کی دماغی بنیاد, جذباتی ضروریات اور تنازعات مثال کیطور پر غلبہ,نفرت,قبولیت,غصہ, نگہداشت اور دیگر معاملات-

قانونی جنسی ابلاغ کے بلاکس. Blocks to legal sexual outlets:
کم درجہ ذہانت,دلکشی سے محروم, حتیمیت کی کمی, کم سماجی مہارت, جنسی خیالات پر پابندی,جنسی عمل کے علم کی کمی, جنسی مسائل / خرابی, مناسب جنسی ساتھی کی عدم دستیابی.

تحفظ کا فقدان(disinihibitors):
الکوحل, منشیات کا استعمال, پورن موویز دیکھنا, مسخ شدہ وقوف, گمراہ کن جنسی رویے, ریپ کی داستانیں(rape myths )
نشانہ بننے والے پر الزام, پر تشدد رویہ جات, سماج دشمن رویے, سماج مخالف زندگی کا رہن سہن, پاگلپن (psychosis) دماغی چوٹ.

مزاحمتی عوامل(inhibitors):
اخلاقی اقدار, شکار کےلیے ہمدردی, تشدد سے نفرت,نتائج کا خوف, قانونی سزائیں, قید, شکار کی عدم دستیابی, شکار (victim) کا مزاحمت کرنا.

Hall,s studies on Rape:
ھال کے نذدیک rapist کی چار بڑی اقسام ہیں.
پہلی قسم: گمراہ کن جنسی بیداری یہ اس وقت رونما ہوتی ہے جب وہ عورت کے خلاف پرتشدد سوچ رکھتا ہے یہ شدید اضطراریت کی قسم ہے.
دوسری قسم:  وقوفی بگاڑ کے ذریعے متحرک ہوتی ہے یا سوچ کی خطا واقعات کی غلط تشریح, دیگر مردوں کے مقابلے میں مختلف معلومات- اسے یقین ہوتا ہے کہ کچھ خواتین ریپ سے لطف اندوز ہوتی ہیں یا ریپ کی خواہش مند ہوتی ہیں. عصمت دری کا حصہ  فتح, مردانگی کا مظاہرہ کرنے کا ایک طریقہ ہے. Date rapist ٹائپ ٹو کی کیٹگری کے ہوتے ہیں.
ڈیٹ ریپسٹ(date rapist) سے مراد وہ ریپسٹ ہیں  جو اپنے ٹارگٹ(جسے نشانہ بنایا گیا ہو) کو بخوبی جانتے ہیں. اپنے ٹارگٹ کو شراب پلاتا ہے تا کہ وہ مزاحمت نہ کر سکے.
تیسری قسم ان ریپسٹ(rapist) کی ہے جو ناراضگی/غصے یا جذباتی لحاظ سے قابو سے باہر ہو جاتا ہے. یہ آدمی بہت ناراض ہوتے ہیں خاص طور پر عورتوں سے. اپنے غصے پر قابو کرنے کا ان کے نزدیک  ایک یہی طریقہ  ہوتا ہے عورت سے زبردستی جنسی تعامل کرنے کا- یہ حیران کن بات نہیں ہے کہ یہ لوگ بہت پرتشدد اور خطرناک ہوتے ہیں.
چوتھی قسم ان افراد کی ہے جو بچپن میں جسمانی یا جنسی ظلم کا شکار ہوتے ہیں. انہیں رشتے بنانے میں مشکلات درپیش ہوتی ہیں اگر ان کی ھسٹری کا جائزہ لیا جاۓ تو انہیں سکول یا گھر میں شدید/دائمی مسائل ہوتے ہیں. چوتھی قسم کے لوگ جنسی یا غیر جنسی قوانین توڑتے ہیں.

Brain structure of rapist:
سائنسدان جو برین سکین کرتے ہیں ان لوگوں کا جو قتل, ریپ اور پر تشدد حملوں میں ملوث ہوتے ہیں انہیں مضبوط شواہد ملیں ہیں کہ ان سائیکو پتھ کا برین سٹر کچر ایببنارمل ہوتا ہے.
وہ سائیکو پتھ جن میں ہمدردانہ جذبات کی کمی ہوتی ہے ان کے برین کے وہ حصے کم gray matter بناتے ہیں جن کا تعلق لوگوں کے متعلق ہمدردانہ جذبات پیدا کرنے سے ہوتا ہے. ان ایریاز  یعنی anterior rostral prefrontal cortex اور temporal lobe میں خرابی لوگوں کے احساسات اور ارادے کو سمجھنے, دباؤ اور خوف کی طرف خستہ/ poor response ردعمل self conscious emotions کی کمی جیسا کہ شرمندگی, احساس جرم وغیرہ کے مسائل درپیش ہوتے ہیں.

آخر میں میرا پیغام ان لوگوں کے نام جو عورت کے بناؤ سنگھار, کپڑوں پر تنقید کرتے ہیں کہ خواتین کے ریپ کی وجہ یہ عناصر ہیں تو ایسے لوگ فورن سے پیشتر کسی دماغی معالج سے رجوع کریں. کیونکہ یہ وجوہات اگر عصمت دری کا باعث ہوتی تو سماج کر ہر شخص زومبیز کیطرح ایسی عورتوں کے پیچھے بھاگ رہا ہوتا لیکن ریپ کرنے والا ان تمام نارمل لوگوں سے مختلف ہوتا ہے. اور ایسے بیانات یا نظریات رکھنے والے جو عورت کے حلیے کو اس کی وجہ مانتے ہیں ان کے لیے ایک خطرناک بات یہ ہے کہ ان میں بھی ایک rapist کی علامات بدرجہ اتم موجود ہوتی ہیں



منسلکہ فائل/فائلیں تصویرچہ
   

  اردو ترجمہ درکار ہے
ارسال کردہ از: راحت - 01-11-2016, 09:29 AM - فورم: جہانِ نثر - جوابات (1)

خلیل جبران کے اس قول کا اردو ترجمہ درکار ہے۔
[تصویر: attachment.php?aid=79]



منسلکہ فائل/فائلیں تصویرچہ
   

  ٹوٹے
ارسال کردہ از: راحت - 01-06-2016, 01:04 PM - فورم: مزاحیہ شاعری - جوابات (7)

لفظ "ٹوٹے" سے تو اکثریت واقف ہی ہوگی۔ ایک آدھ شعر کے لئے الگ سے دھاگہ بنانا اچھا نہیں لگا، سوچا ایک ہی دھاگہ بنا کر چھوٹے چھوٹے ٹوٹے وقتا" فوقتا" چلاتے رہیں گے۔

پیشِ خدمت ہے:

گلی گلی میں بھٹکتا ہے شور کرتا ہے
ہمارے عشق نے سستی شراب پی لی ہے


  بیت بازی (2016)
ارسال کردہ از: راحت - 01-06-2016, 12:56 PM - فورم: بزمِ ادب - جوابات (14)

نئے سال کی آمد مبارک ہو۔ بیت بازی کا سلسلہ حسبِ معمول اس ماہ بھی جاری رکھیں گے۔  وہی سادہ سے اصول اور آسان سے قواعد جو کہ بیت بازی میں ہوا کرتے ہیں یہاں بھی لاگو ہوں گے۔
ابتدا کرتے ہیں۔


کون جانے کہ نئے سال میں تو کس کو پڑھے
تیرا میعار بدلتا ہے نصابوں کی طرح



تو دیر کس بات کی، پھینکئے حرف "ح" سے شروع ہونے والا شعر۔ ۔ ۔


Rainbow تمام ارکان کو نیا سال 2016 مبارک ہو
ارسال کردہ از: محمد علی مکی - 12-31-2015, 11:50 PM - فورم: محفلِ ارکان - جوابات (1)

[تصویر: attachment.php?aid=77]

تمام ارکان کو نیا سال مبارک ہو Smile



منسلکہ فائل/فائلیں تصویرچہ
   

Question پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا ڈیٹا چوری کا واقعہ
ارسال کردہ از: محمد علی مکی - 12-28-2015, 10:39 PM - فورم: آپ کے کالم - جوابات (1)

ڈیٹا کی چوری اور فکری حقوق کی خلاف ورزی ہمیشہ سے آج کی دنیا کے کارپوریٹ اداروں کو درپیش سب سے بڑا خطرہ رہا ہے، اس میں برقی کوائف یعنی الیکٹرانک ڈیٹا سے لے کر روایتی دستاویزات وتجارتی راز سبھی کچھ شامل ہے، تاہم حالیہ دنوں میں ڈیٹا چوری کا جو واقعہ پاکستان میں ہوا ہے وہ شاید سوویت یونین کی کے جی بی کی طرف سے امریکہ کے مین ہٹن پراجیکٹ سے ایٹمی راز چرانے جتنا بڑا نا ہو مگر پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا واقعہ ضرور قرار دیا جاسکتا ہے، اور وہ ہے پاکستان کی سب سے بڑی آئی ٹی کمپنی ایگزیکٹ کا ڈیٹا اور تجارتی راز جسے خبروں کے مطابق وفاقی تحقیقاتی ادارے المعروف ایف آئی اے کے سائبر کرائم یونٹ کے ایک ہونہار کرپٹ افسر نے غیر قانونی طور پر انکوائری کے نام پر چوری کرتے ہوئے اسے لیکسن گروپ کو فروخت کر دیا ہے جس میں ایگزیکٹ کے تمام سوفٹ ویئر، تجارتی راز اور ڈیٹا بیس شامل ہے.

یقیناً ایگزیکٹ کا یہ ڈیٹا اور تجارتی راز پاکستان کے اندر یا پاکستان کے باہر کسی بھی دوسری آئی ٹی کمپنی کے لیے ایک خزانے کی سی حیثیت رکھتا ہے جو اب لیکسن گروپ کے ہاتھ لگ گیا ہے جنہوں نے ایگزیکٹ کے کاروباری نمونے یعنی بزنس ماڈل کو اپنی آئی ٹی کمپنی میں لاگو کر دیا ہے، اب صورتِ حال یہ ہے کہ لیکسن گروپ کی آئی ٹی کمپنی ایگزیکٹ کے اُسی بزنس ماڈل کی بنیاد پر بزنس کر رہی ہے جس کے تحت ایگزیکٹ، اس کی انتظامیہ اور ملازمین مئی 2015 سے زیرِ عتاب ہیں؟!

مئی میں ایگزیکٹ کے بند ہونے کے بعد پاکستان کی آئی ٹی انڈسٹری میں ایکسپریس/لیکسن گروپ کی دلچسپی کی خبریں عام تھیں، اور حالیہ پیش رفت کے بعد یہ بات روزِ روشن کی طرح عیاں ہوگئی ہے کہ اس ساری سازش کے پیچھے کس کے مفادات تھے اور ان کے اغراض ومقاصد کیا تھے، گزشتہ مئی میں جعلی ڈگریوں کا شوشہ پھیلانے میں بظاہر امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کا ہاتھ معلوم ہوتا ہے تاہم ❞اتفاق❝ سے یہی نیویارک ٹائمز ایکسپریس میڈیا گروپ کا پارٹنر بھی ہے، خبر کی اشاعت کے فوراً بعد نون لیگ کی سرکار کی طرف سے ایگزیکٹ پر دھاوا بولے جانے کے بعد ایکسپریس نیوز اور اس کے حواری نام نہاد اخباری چینلوں نے بھرپور کوشش کی کہ اس خبر کو جتنا ہوسکے طول دیا جائے اور سنسنی خیز تر بنا کر عوام کے سامنے پیش کیا جائے.

ایگزیکٹ کے بند ہونے کا فائدہ براہ راست ان میڈیا گروپس کو پہنچا ہے جنہیں ایگزیکٹ کے آنے والے بول میڈیا گروپ سے شدید خطرات درپیش تھے جو اس سازش کے بعد محوِ پرواز نہ ہوسکا.

تاہم ایکسپریس میڈیا گروپ (لیکسن گروپ) نے ایک تیر سے دو شکار کیے، نہ صرف میڈیا انڈسٹری میں آنے والے حریف بول میڈیا گروپ کو اپنے راستے سے ہٹانے میں کامیاب رہا بلکہ اپنی آنے والی آئی ٹی کمپنی کے لیے ایگزیکٹ کے تجارتی راز بھی چرانے میں کامیاب رہا.

ذرائع کے مطابق زین بن قمر نامی شخص کی سربراہی میں جسے بلال لاکھانی نے متعین کیا ہے جو کہ سلطان لاکھانی کا بیٹا ہے، تقریباً 60 سے 70 ملازمین پہلے ہی ڈیجیٹل انٹریکٹیو سلوشنز نامی کمپنی میں کام کر رہے ہیں، سلطان لاکھانی کی اس نئی آئی ٹی کمپنی میں بعینہ وہی بزنس ماڈل روبہ عمل ہے جس کے لیے ایگزیکٹ تا حال زیرِ عتاب ہے.

سوال یہ ہے کہ اگر ایگزیکٹ کا بزنس مبینہ طور پر ❞غیر قانونی❝ تھا تو کیا نون لیگ کی سرکار سلطان لاکھانی کی اس نو مولود آئی ٹی کمپنی پر بھی ہاتھ ڈالنے کی ہمت کرے گی؟ یا اسے بچانے کے لیے وہ ہاتھ آگے آجائیں گے جنہوں نے ایگزیکٹ اور بول کو بند کرانے میں اپنا ہم ترین کردار قومی فریضہ سمجھ کر ادا کیا تھا؟


    ہمارے بارے میں
اردو لینکس کمپیوٹنگ میں اردو کوڈر کو نمایاں مقام حاصل ہے، سنہ 2007 سے ہم نے یہ بارِ ثقیل اٹھا رکھا ہے، پاک لینکس ہمارا ایسا ہی ایک شاہکار ہے جو اولین اردو لینکس آپریٹنگ سسٹم ہے۔